in ,

آکسیجن جلاتی ہے، مگر جلتی نہیں۔ ہائڈروجن جلتی ہے، مگر جلاتی نہیں۔ دونوں ملتے ہیں تو پانی بنتا ہے، جو نہ جلتا ہے نہ جلاتا ہے، بلکہ جلتے کو بجھاتا ہے؟

آکسیجن جلاتی ہے، مگر جلتی نہیں۔ ہائڈروجن جلتی ہے، مگر جلاتی نہیں۔ دونوں ملتے ہیں تو پانی بنتا ہے، جو نہ جلتا ہے نہ جلاتا ہے، بلکہ جلتے کو بجھاتا ہے؟؟؟

کیمسٹری میں جلنا ایسے عمل کو کہتے ہیں جس میں حرارت اور روشنی دونوں خارج ہوں۔ ہائیڈروجن جب آکسیجن کے ساتھ کیمیائی تعامل کرتی ہے تو دونوں کے درمیان بڑا مضبوط بانڈ بنتا ہے کیونکہ دونوں چھوٹے سائز کے ایٹم ہیں اور ان کی برقی منفیت کا فرق بھی کافی ہوتا ہے۔ اس لیے ان دونوں کے درمیان کشش بہت طاقتور ہوتی ہے۔ اور دونوں اس طاقتور کشش کے زیر اثر اپنی حرکی توانائی کو خارج کر دیتے ہیں جو حرارت اور روشنی کی صورت میں ظاہر ہوتی ہے۔اس عمل کی تفصیل کچھ یوں ہے کہ آکسیجن چونکہ برقی منفیت کے اعتبار سے دوسرا طاقتور ترین عنصر ہے اس لیے یہ جس دوسرے عنصر سے بھی ملے گا اس کے الیکٹرونز کو انتہائی طاقت سے کشش کرے گا۔ یوں یہ الیکٹرونز، آکسیجن کی طاقتور کشش کے تحت، زیادہ توانائی سے بہت کم توانائی کی حالت میں چلیں جائیں گے اور اپنی زائد توانائی کو خارج کردیں گے۔ یہ توانائی صرف حرارت یا پھر حرارت اور روشنی دونوں کی صورت میں خارج ہوجائے گی۔ اب چونکہ آکسیجن خود اپنے الیکٹرونز نہیں دیتی بلکہ دوسرے عناصر مثلاً ہائڈروجن، کاربن وغیرہ کے الیکٹرونز کھینچ کر ان کی توانائی کے اخراج کا باعث بنتی ہے اس لیے کہا جاتا ہے کہ آکسیجن جلاتی ہے، مگر جلتی نہیں۔ اور دوسرے عناصر جو آکسیجن یا اس طرح کے طاقتور ایٹمز کو الیکٹرونز دے دیتے ہیں یا دیتے نہیں تو ان کی جانب جھکانے پر مجبور ہوجاتے ہیں، ان کے متعلق کہا جاتا ہے کہ وہ جلنے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔ اب آئیں پانی کی جانب۔ پانی نہ جلتا ہے نہ جلاتا ہے بلکہ جلتے کو بجھاتا ہے۔ پانی کی بجھانے کی صلاحیت کی وجہ اس کے مالیکیولز کے درمیان بڑی مضبوط ہائیڈروجن بانڈنگ کا پایا جانا ہے۔ جب جلتے اجسام توانائی خارج کررہے ہوتے ہیں تو پانی اس توانائی کو جذب کرکے اپنی ہائیڈروجن بانڈنگ کو توڑنے اور بخارات میں تبدیل کرنے کے لیے استعمال کرتا ہے۔ یوں ان عناصر کے ایٹموں کو ری ایکشن شروع کرنے کے لیے درکار ابتدائی انرجی میسر نہیں رہتی اور جلنے کا عمل رک جاتا ہے۔ یاد رکھیں جلنا یا جلانا ایک کیمیائی تعامل ہے، جبکہ بجھانا ایک طبعی عمل ہے۔
(اعجاز عباسی)

Written by admin

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

ڈارک میٹر اینڈ ڈارک انرجی۔۔۔پراسرار کائنات۔

بھنورا شمع یا آگ کی جانب کیوں کھنچتا اور آخر جل مرتا ہے؟ سائنسی وضاحت درکار ہے؟